July 2, 2019National News

دو لاکھ کی 4 بکریاں، زرعی و کمرشل اراضی، ڈالر، پاؤنڈز اور یورو اکاؤنٹس، وزیراعظم عمران خان نے اپنے اثاثوں کی تفصیلات ظاہر کر دیں

 الیکشن کمیشن آف نے ممبران قومی اسمبلی کے اثاثوں کی تفصیلات جاری کردی ہیں۔ جس کے تحت پاکستان پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری امیر ترین جبکہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے مراد سعید غریب رکن اسمبلی ہیں۔ الیکشن کمیشن کی جانب سے جاری تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے 10 کروڑ 82 لاکھ روپے مالیت کی پراپرٹی اور رقم ظاہر کی، وزیراعظم نے ورثے اور تحفے میں ملی پراپرٹی کی مالیت ظاہرنہیں کی۔ دستاویزات کے مطابق وزیراعظم کی زمان پارک میں ورثہ میں ملی رہائشگاہ کی تعمیر پر4 کروڑ53 لاکھ روپے لاگت آرہی ہے،

وزیراعظم نے بنی گالہ میں 300 کنال کا گھر تحفہ کے طور پر ظاہر کیا، ٹیکس سال 2015/16 میں رہائشگاہ کی اضافی تعمیر پر ایک کروڑ 14 لاکھ روپے اخراجات آئے۔دستاویزات میں بتایا گیاہیکہ وزیراعظم عمران خان کے پاس بنی گالہ میں 50 لاکھ روپے کی 6 کنال 16 مرلہ اراضی ہے، وزیراعظم کو میانوالی میں 10 مرلہ پر بنا گھر ورثہ میں ملا، وزیراعظم کے پاس شیخو پورہ میں ورثہ میں حاصل کی گئی 80 کنال اراضی ہے، عمران خان کو بھکر میں 260 کنال، 8 ایکڑ کی 4 مختلف اراضی ورثہ میں ملی، وزیراعظم کے پاس میاں چنوں میں 50 ہزار روپے مالیت کی زرعی اراضی ہے۔دستاویزات کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے 4 غیر ملکی کرنسی کے بینک اکاؤنٹس میں سرمایہ کاری کر رکھی ہے، وزیراعظم کے پاؤنڈ اکاؤنٹ میں 2 ہزار67 پاونڈ ہیں اور ڈالر اکاؤنٹ میں 3 لاکھ 29 ہزار60 ڈالرز، دوسرے اکاونٹ میں 1 ہزار 470 ڈالرز ہیں جب کہ وزیراعظم عمران خان کے یورو اکاونٹ میں کوئی رقم نہیں۔دستاویزات میں مزید بتایا گیا ہیکہ عمران خان نے گرینڈ حیات ٹاور میں فلیٹ کیلئے 1 کروڑ19 لاکھ روپے ایڈاوانس جمع کرا رکھے ہیں، وزیراعظم عمران خان کے پاس ذاتی گاڑی نہیں ہے، ان کے پاس 2 کروڑ 40 لاکھ روپے کیش موجود ہے، وزیراعظم کے 2 ملکی بینک اکاؤنٹس میں 96 لاکھ روپے ہیں، وزیراعظم 2 لاکھ روپے مالیت کی 4 بکریوں کے مالک ہیں۔ وزیراعظم کی اہلیہ کے اثاثوں کی تفصیلات کے مطابق بشریٰ بی بی کے پاس پاکپتن، اوکاڑہ اور بنی گالہ میں پراپرٹی ہے، بشریٰ بی بی کے پاس پاکپتن میں 52 کنال اور 379 کنال اراضی ہے، ان کے پاس اوکاڑہ میں 267 کنال اراضی ہے اور بنی گالہ میں 3 کنال کی رہائشگاہ ہے۔ شہبازشریف اور ان کی اہلیہ کے اثاثوں کی تفصیلات کے مطابق قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف شہبازشریف کے اثاثوں کی مالیت 18 کروڑ 96 لاکھ روپے ہے۔ دستاویزات کے مطابق شہبازشریف کے پاکستان سے باہر14 کروڑ 78 لاکھ روپے مالیت کے اثاثے ہیں، ان کی لندن میں 2 پراپرٹی اور ایک بینک اکاؤنٹ ہیں، شہبازشریف کی پاکستان میں جائیداد کی مالیت 1 کروڑ 47 لاکھ روپے ہے، ان کی حدیبیہ پیپرمل، حدیبیہ انجینیرنگ اور حمزہ ملز میں 2 لاکھ 73 ہزارر وپیکی سرمایہ کاری ہے۔ شہبازشریف کی اہلیہ نصرت شہباز کے اثاثوں کی مالیت 23 کروڑ روپے سے زائد ہے، شہبازشریف کی اہلیہ تہمینہ درانی کے اثاثوں کی مالیت 57 لاکھ روپے سے زائد ہے۔ آصف زرداری کے اثاثوں کی تفصیلات کے مطابق پاکستان پیپلزپارٹی کے صدر آصف زرداری کے اثاثوں کی مالیت 67 کروڑ روپے سے زائد ہے۔ دستاویزات کے مطابق آصف زرداری کی پاکستان سے باہر کوئی جائیداد نہیں، ان کے پاس 1 کروڑ 62 لاکھ روپے مالیت سے زائد کا اسلحہ ہے، ان کے پاس 99 لاکھ روپے مالیت کے جانور اور گھوڑے ہیں جب کہ سابق صدر 6 گاڑیوں کے مالک ہیں۔ اس کے علاوہ آصف زرداری کے پاس دبئی کا اقامہ بھی ہے۔ ای سی پی کی جانب سے جاری تفصیلات میں مزید بتایا گیا الیکشن کمیشن کے مطابق بلاول بھٹو زرداری امیر ترین ارکان قومی اسمبی میں شامل ہیں اور ان کے اثاثوں کی مالیت ایک ارب 54 کروڑ روپے سے زائد ہے جبکہ ان کے دبئی میں 2 ولاز میں شراکت داری بھی ہے۔ ای سی پی کے مطابق وزیر ریلوے شیخ رشید احمد کے پاس 3 کروڑ 58 لاکھ روپے کے اثاثے، 8 کروڑ 73 لاکھ روپے کا بینک بیلنس اور 25 لاکھ روپے کے پرائز بانڈ ہیں۔ تفصیلات میں بتایا گیا کہ مسلم لیگ (ن) کے رہنما رانا ثنا اللہ کے پاس 6 کروڑ 60 لاکھ روپے کے اثاثے ہیں، اسی طرح پیپلز پارٹی کے سید خورشید شاہ بھی 6 کروڑ روپے کے اثاثوں کے مالک ہیں۔ ادارے کے مطابق وفاقی وزیر مواصلات مراد سعید غریب ارکان قومی اسمبلی میں شامل ہیں اور ان کے پاس 36 لاکھ نقد اور 15 تولا سونا ہے۔ اسی طرح پی ٹی آئی رہنما شہریار آفریدی 2 کروڑ روپے کے اثاثوں کے مالک ہیں جبکہ وزیر دفاع پرویز خٹک13 کروڑ 95 لاکھ کے اثاثوں اور ڈھائی کروڑ روپے کا بینک بیلنس رکھتے ہیں۔ الیکشن کمیشن کے مطابق پی ٹی ا?ئی کے ایم این اے سمیع الحسن گیلانی ایک ارب روپے سے زائد اثاثوں کے مالک ہیں جبکہ وفاقی وزیر علی زیدی 3 کروڑ روپے سے زائد اثاثے رکھتے ہیں۔

Like Our Facebook Page

Latest News